ستمگر کی ستمگری از نگین حنیف

0
کہاں ملے گی بھلا اس ستمگری کی مثال
ترس بھی کھاتا ہے مجھ پر تباہ کر کے مجھے
“تم نے کس کی اجازت سے میرے گھر میں قدم رکھا؟ وہ بھی میری غیرموجودگی میں….” وہ اس کی اس افطاد پر تیار نہ تھی. ایک جھٹکے سے اس کا ہاتھ اسکی کمر کے پیچھے کیا تھا اور دوسرے ہاتھ سے اس کا منہ دبوچے ہوئے تھا.
“م… میں… میں خود نہیں گئی تھی مجھے تائی امی نے بلایا تھا، انہیں مدد کی ضرورت تھی.” اس سے بولا بھی نہیں جا رہا تھا.
” چلو مان لیا انہیں مدد کی ضرورت تھی لیکن تمہیں کس نے کہا تھا کہ مہمانوں کے سامنے آؤ….؟”
میں… میں ان کے سامنے نہیں آ…. آئی تھی، میں کچن میں تھی.
” انہیں الہام ہوا تھا کہ زرفشاں بی بی کچن میں ہیں؟”
” میں نہیں جانتی….. مجھے درد…. درد ہو رہا ہے…” وہ رو دینے کو تھی.
مانا کہ وہ لوگ نہیں جانتے تھے. لیکن تم تو جانتی تھی نا کہ تمہارا نکاح ہو چکا ہے.. اسکی گرفت اس کے بازوں پر اور بھی سخت ہوئی تھی اور آنکھیں سرخ انگارہ….
” کیا آپ مانتے ہیں اس نکاح کو؟ ” پتہ نہیں اس میں اتنی ہمت کہاں سے آئی تھی لیکن مقابل کو دو منٹ چپ رہنے پر مجبور کر گئی تھی.
“اپنی زبان کا استعمال اتنا ہی کیا کرو جتنا کہا جائے. “وہ اس کا منہ جھٹک کر کمرے سے جاچکا تھا.

 

Sitamgar Ki Sitamgari Novel by Nageen Hanif – Last Episode…

ستمگر کی ستمگری از نگین حنیف – آخری قسط نمبر 14

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: