عشق کا عین از علیم الحق حقی

0
الہیٰ بخش کو پہلی نظر میں عشق ہوا تو یہ کوئی حیرت کی بات نہیں- اس کا خمیر ہی عشق کی مٹی سے اٹھا تھا-
بچپن ہی سے وہ عشق و محبت کی باتیں سنتا رہا تھا- اس وقت سے جب اسے محبت کے “م” اور عشق کے “ع” کی پہچان بھی نہیں تھی- محبت اور عشق کی تلقین اس کے باپ کا وظیفہ تھا- وہ ہر وقت اس عشق اور محبت کی بات کرتا، جو انسان ہونے کے ناتے اس پر اور اس کی آنے والی نسلوں پر فرض تھی اور یہ تعلیم اسے اس کے بزرگوں نے اسی طرح دی تھی- وہ نسلاٰ عاشق تھے-
الہیٰ بخش کی سمجھ میں اپنے باپ کا فلسفہء عشق کبھی نہیں آیا- ابتدا میں تو وہ سمجھنے کے قابل ہی نہیں تھا- باپ بھی عشق کی تلقین اسے گھٹی سمجھ کر پلاتا تھا کہ گھٹی کا اثر کبھی نہیں جاتا، بلکہ وہ بہت مضبوطاور دیر پا اثر ہوتا ہے- انسان اس سے کسی طرح لڑ ہی نہیں سکتا- مگر جب الہیٰ بخش سمجھداری کی حدود میں داخل ہوا، تب بھی ابا کا فلسفہء عشق اس کے حلق سے کبھی نہیں اترا- التا اس کے اندر ایک مزاحمت پیدا ہو گئی- اس کے مزاج میں عشق سے بغاوت آگئی-

 

Leave A Reply

Your email address will not be published.

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: